• Wednesday, 20 October 2021

9افراد کے قتل کی دل دہلادینے والی فوٹیج منظر عام پر

صادق آباد (نیا ٹائم ) 3 روز قبل ماہی چوک میں 9افراد کے قتل کا واقعہ،دل دہلا دینے والے واقعے کی سی سی ٹی وی فوٹیج منظر عام پر آگئی ،فوٹیج میں ملزموں کوفائرنگ کرتےہوئے باآسانی دیکھا جاسکتاہے،فوٹیج میں دیکھا جاسکتا ہے کہ قتل کی واردات میں مسلح ڈاکوؤں نے پٹرول پمپ پر دن دیہاڑے دھاوا بولا ۔ فوٹیج میں تین ڈاکو ؤں کو ہاتھوں میں اسلحہ پکڑے بھی دیکھا جا سکتا ہےڈاکوؤں نے پہلے پمپ مالکان سے تکرار کی اور جس کے بعد فائرنگ کرکے ان تمام افراد کو قتل کردیا۔ملزموں کی فائرنگ سے ہر طرف بھگدڑ مچ گئی اور لوگ جان بچا کر بھاگتے رہے۔شرپسندوں نے مسجد سے نماز پڑھ کرآنے والے افراد پر بھی فائر نگ کی جبکہ متعدد راہگیر بھی فائرنگ کی زد میں آئے ،فوٹیج میں یہ بھی دیکھا گیا ہے کہ فائرنگ کے بعد پیڑول پمپ کے اطراف سناٹا چھاگیا اور ڈاکوبا آسانی فرارہوگئے
دوسری جانب قتل کے واقعہ کو 3 دن گزرگئے لیکن پولیس کی جانب سے احال کوئی گرفتاری عمل میں نہیں لائی گئی جبکہ جس شخص کی مدعیت میں اس واقعے کا مقدمہ درج کیا گیا تھا اس کو بھی ڈاکوؤں کی جانب سے دھمکیاں موصول ہونے پر اس نے کیس سے دستبرداری کا فیصلہ کیا ہے ۔عدم تحفظ کا شکار مقتولین کے ورثاء علاقہ چھوڑنے پر مجبور ہوگئے ہیں۔جبکہ واقعہ میں زخمی ہونے والے شخص نے بتایا کہ ان کی کسی سے کوئی دشمنی نہیں ہے اور نہ ہی وہ کوئی کارروبار کرتا ہے ۔خیال رہے کہ اتوار کی دوپہرعلاقہ مکینوں نے مقتولین کی لاشیں سندھ اور بلوچستان سے پنجاب آنے والی شاہراہ پررکھ کراحتجاج کیا اور اعلیٰ حکام سے انصاف کی اپیل کی تھی ۔مظاہرین کے دباؤ پر ڈی پی او رحیم یار خان اسد سرفراز کو تبدیل کرکےنئےڈی پی او کیپٹن ریٹائرڈ علی ضیاء کو چارج سنبھالنے کا حکم دیا گیا تھا ، واضح رہے کہ پیر کے روز ہی چوک میں جاں بحق 9افراد کی نماز جنازہ ادا کی گئی جس میں ہزاروں افراد نے شرکت کی ،پولیس کے مطابق قتل ہونے والے افراد کاتعلق ایک ہی خاندان سے ہے۔ایڈیشنل آئی جی جنوبی پنجاب صادق آباد میں مقتولین کے گھر پہنچے اور ورثاء سے اظہار تعزیت کی ایڈیشنل آئی جی جنوبی پنجاب نے کہا کہ اس سانحہ پر محکمہ پولیس شرمسار ہےاور قاتلوں کو کیفرکردار تک پہنچانے تک پولیس چین سے نہیں بیٹھے گی۔انہوں نے مقتولین کے ورثاء کو قاتلوں کے خلاف کاروائی کی یقین دہانی کروائی۔یادرہے کہ وزیراعلی پنجاب عثمان بزادر کے نوٹس کے بعد اے آئی جی جنوبی پنجاب نے متعلقہ ڈی ایس پی سرکل صادق آباد ، ایس ایچ اوتھانہ کوٹ سبزل اور چوکی انچارج کو معطل کردیاتھا ۔