کورونا کے نام پر اربوں روپے کی مالی بے ضابطگیوں کا انکشاف

کورونا کے نام پر اربوں روپے کی مالی بے ضابطگیوں کا انکشاف

لاہور(نیا ٹائم) پنجاب میں کورونا سے لڑنے کے نام پر اربوں روپے کی مالی بے ضابطگیوں کا انکشاف سامنے آیا ہے ۔آڈیٹر جنرل کی رپورٹ میں کوروناکے دوران فائیننشل مینجمنٹ میں  مجموعی طور پر 20 ارب 30 کروڑ روپے سے زائد کی بے ضابطگیوں کی نشاندہی کی گئی ہے ۔

 

 کوروناسے لڑنے کے نام پر اربوں روپے کی مالی بے ضابطگیاں آڈیٹر جنرل کی رپورٹ نے پول کھول دیا،کووڈ-19 کے دوران فائننشل مینجمنٹ میں  مجموعی طور پر 20 ارب 30 کروڑ روپے سے زائد کی بےضابطگیوں کی نشاندہی کی گئی ہے۔آڈیٹر جنرل کی رپورٹ کے مطابق محکمہ صحت سمیت لوکل گورنمنٹ،پی ڈی ایم اے،صفائی والی کمپنیوں کو  5 ارب 24 کروڑ روپے سے زائد غیر قانونی فنڈز دئیے گئے جبکہ محکمہ خزانہ کی ہدایت کے برخلاف مختلف ہسپتالوں اورسرکاری اداروں نے 6 ارب 48 کروڑ روپے نجی بنکوں میں رکھ کر مبینہ طور پر منافع کمایا۔

 

آڈیٹر جنرل کی رپورٹ کے مطابق ملتان کے احساس کفالت سینٹر اور قرنطینہ سنٹر میں کیٹرنگ سروس اور دیگر خریداری کے امور میں 9 کروڑ 29 لاکھ سے زائد کی بے ضابطگیاں ہوئیں جبکہ  پنجاب کے 36 ڈپٹی کمشنرز کو فراہم کئے گئے 3 ارب 82 کروڑ روپے سے زائد کے فنڈز میں بھی آڈیٹر جنرل کی جانب سے محکمہ خزانہ کو دی گئی ہدایت کو نظر انداز کیا گیا۔آڈٹ رپورٹ میں قرنطینہ سینٹرز کے قیام اور کورونا فنڈز کے استعمال میں بھی بے ضابطگیوں کا انکشاف ہوا ہے۔ترجمان محکمہ صحت کا کہنا ہے کہ رپورٹ کی بنیاد پر متعلقہ ذمہ داران کے خلاف کارروائی عمل میں لائی جائے گی۔

 

 

پیناڈول بنانے والی کمپنی نے اپنی پروڈکشن بند کرنے کا عندیہ دیدیا