پلاٹوں کی غیر قانونی الاٹمنٹ کاکیس،سیف الملوک کھوکھربری

پلاٹوں کی غیر قانونی الاٹمنٹ کاکیس،سیف الملوک کھوکھربری

لاہور(نیاٹائم)اینٹی کرپشن عدالت لاہور نے پلاٹوں کی غیر قانونی الاٹمنٹ اور ریکارڈ میں ردوبدل کر کے کم رجسٹری فیس ادا کرنے کے دو مقدمات میں لیگی رہنماء سیف الملوک کھوکھر کو بری کر دیا۔

 

اینٹی کرپشن عدالت کے جج مشتاق الٰہی بنگی نے سماعت کی،سیف الملوک کھوکھر کی جانب سے راؤ مدثر ایڈووکیٹ نے دلائل دیئے کہ ملزم سیف الملوک کھوکھر  کے وکیل نے بتایا کہ میرے موکل پر سیاسی انتقام کیلیے جھوٹا  مقدمہ بنایا گیا تھا،اینٹی کرپشن اسٹیبلشمنٹ پنجاب نے سیف الملوک کھوکھر ,رجسٹری محرر راجہ ندیم احمد اور پٹواری افتخار کنول کیخلاف 2020 میں مقدمہ درج کیا۔

 

اینٹی کرپشن حکام نے سیف الملوک کھوکھر اور دیگر کیخلاف چالان جمع کرا رکھا ہے ،عدالت مقدمہ خارج کر کے بری کرنے کا حکم دے،عدالت نے ملزمان کو دو مقدمات میں بری کرتے ہوئے قرار دیا کہ ملزم سیف الملوک کھوکھر اور دیگر کیخلاف الزامات ثابت نہیں ہوئے،ملزمان کیخلاف ٹرائل کیلیے چالان میں شواہد ناکافی ہیں۔

 

ٹرانس جینڈر ایکٹ کو کالعدم قراردیاجائے،درخواست دائر