اسلامیہ یونیورسٹی بہاول پور خطے کا عظیم اثاثہ ہے؛گورنرپنجاب

اسلامیہ یونیورسٹی بہاول پور خطے کا عظیم اثاثہ ہے؛گورنرپنجاب

بہاولپور(نیاٹائم)گورنرپنجاب و چانسلر انجینئر محمد بلیغ الرحمن نے کہا ہے کہ وطن عزیز کو قوموں کی صف میں باوقار مقام دلانے کے لیے معاشی استحکام ضروری ہے۔

 

گورنر پنجاب نے ان خیالات کا اظہار آج اسلامیہ یونیورسٹی بہاول پور کے 18ویں کانووکیشن سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ عالمگیریت کے اس دور میں علم پر مبنی معیشت کے فروغ کے لیے اعلیٰ تعلیمی اداروں کا کردار انتہائی اہمیت کا حامل ہے۔ کانووکیشن میں 2016-20ء کے 1857طلباء وطالبات کو ڈگریاں اور میڈل عطا کیے گئے۔ ان طلبہ میں 8پی ایچ ڈی، 71ایم فل،67گولڈ اور 54سلور میڈلسٹ شامل ہیں جنہیں بی ایس، بی ایس سی اور ایم ایس، ایم ایس سی کی ڈگریاں عطاکی گئیں۔ انجینئر محمد بلیغ الرحمن نے کہا ہے کہ ہمارے تعلیمی ادارے ایسے گریجویٹس پیدا کریں جنہیں اپنے علوم پر مکمل دسترس حاصل ہواور وہ اعلیٰ اخلاقی اقدار کے حامل ہوں۔ خطہ بہاول پور حضرت خواجہ غلام فریدؒ کے انسانیت سے امن و محبت کے آفاقی پیغام سے بھرپور ہے۔اسلامیہ یونیورسٹی بہاول پور خطے کا عظیم اثاثہ ہے جو نوابین بہاول پور نے اس خطے کی علمی میراث کے تسلسل کے لیے قائم کیا۔ اس موقع پر چانسلر کے کہنے پر تمام طلباء وطالبات نے کھڑے ہو کر اپنے والدین اور اساتذہ کرام کو خراج تحسین پیش کیا۔پاکستان کے قیام میں نواب آف بہاول پور کا کردار اور استحکام میں حصہ ہمیشہ یاد رہے گا۔جاپان کی صنعتی ترقی میں کوالٹی اور آپس میں ملکر کائزن کے اصول سے بہتری کا اہم کردار ہے اور ہم بھی مستقل بہتری کی جانب قدم رکھیں۔انہوں نے طلباء وطالبات سے کہا کہ اپنی توانائیاں اورصلاحتیں ملک و قوم کے لئے وقف کر دیں۔کامیابی کے لیے اعلی کردار اہم ہے۔کنسورشیم برائے کلائمیٹ چینج میں اسلامیہ یونیورسٹی بہاول پور کا بہت کام ہے۔ حال ہی میں مری میں ہونیوالی وائس چانسلر کانفرنس میں فیصلہ ہوا کہ اس کنسورشیم کی سربراہی اسلامیہ یونیورسٹی بہاول پور کرے گی۔یہ امر باعث اطمینان ہے کہ اسلامیہ یونیورسٹی بہاول پور وائس چانسلر انجینئر پروفیسر ڈاکٹر اطہر محبوب کی قیادت میں تمام شعبوں میں نمایاں ترقی کر رہی ہے اور ٹائمز ہائر ایجوکیشن 2023ء کی رینکنگ میں دنیا کی 801تا 1000یونیورسٹیوں میں شامل ہو چکی ہے۔ یونیورسٹی میں تحقیق و تدریس کا اعلیٰ معیار، طلباء وطالبات کی تعداد میں غیر معمولی اضافہ، خود کفالت کے لیے اقدامات، نئے شعبوں اور فیکلٹیوں کا قیام، اساتذہ کرام کی ترقیاں اور تعیناتیاں قابل تحسین اقدام ہے۔ یونیورسٹی میں سیرتؐ چیئر اور سر صادق محمدخان چیئر کو فعال کرنے کے اقدامات انتہائی خوش آئند ہیں۔

 

طلباء وطالبات کی فلاح و بہبود خصوصاً 100کلومیٹر کے دائرے میں اسلامیہ یونیورسٹی بہاول پور کی بس سروس کی فراہمی قابل تعریف اقدام ہے۔ اسلامیہ یونیورسٹی بہاول پور ملک کی پہلی ہیپاٹائٹس فری یونیورسٹی بن چکی ہے۔حالیہ سیلاب میں اسلامیہ یونیورسٹی بہاول پور کی جانب سے فلڈ ریلیف مہم اور عطیات کی فراہمی انتہائی قابل تحسین اقدام ہے۔ کانووکیشن سے خطاب کرتے ہوئے وائس چانسلر اسلامیہ یونیورسٹی بہاول پور انجینئر پروفیسر ڈاکٹر اطہر محبوب نے 18ویں کانووکیشن میں چانسلر انجینئر محمد بلیغ الرحمن، اعلیٰ حکام، اراکین پارلیمنٹ، معززین شہر اور سول سوسائٹی کے نمائندوں، میڈیا، طلباء وطالبات اور ان کے والدین کو خوش آمدید کہا۔ انہوں نے کہا کہ اسلامیہ یونیورسٹی بہاول پور کی حالیہ کامیابیاں بین الاقوامی رینکنگ کے اداروں کی جانب سے واضح طور پرسامنے آئی ہیں اور جامعہ اسلامیہ ایک عالمی یونیورسٹی کے طور پر ابھر کر سامنے آئی ہے۔یہ تمام کامیابیاں اساتذہ کرام، ملازمین اور طلباء وطالبات کی اجتماعی محنت اور جاں فشانی کا نتیجہ ہے۔اسلامیہ یونیورسٹی جنوبی پنجاب کی اول، پنجاب کی دوئم اور پاکستان کی 7 ویں یونیورسٹی بن چکی ہے جس میں اساتذہ کرام کی تعداد تقریباً 1400 اور جز وقتی 1000 ہے جبکہ طلبہ کی تعداد 65000ہو چکی ہے۔یونیورسٹی نے گزشتہ تین سالوں کے دوران تدریس و تحقیق، انتظامی اور مالیاتی امور اور ترقیاتی منصوبوں میں بڑے پیمانے پر اصلاحات کا آغاز کیا۔ اب تک 27سلیکشن بورڈز اور63سلیکشن کمیٹیاں منعقد ہوچکی ہیں جن کے ذریعے 3396ٹیچنگ ونان ٹیچنگ سٹاف کا تقرر عمل میں لایا گیا ہے۔ اِسی طرح فیکلٹی کی تعداد کو 550سے بڑھا کر تقریباً 1400کر دیا گیا ہے تاکہ تدریس اور تحقیق کے لئے الگ الگ افرادی قوت دستیاب ہو اور معیار میں بھی اضافہ ہو۔ تقریباً808ساتذہ کرام کا تقرر ہوا جس میں پروفیسرز، ایسوسی ایٹ پروفیسرز، اسسٹنٹ پروفیسرز، لیکچرارز اور ایسوسی ایٹ لیکچرارز شامل ہیں۔

 

پرائمری اساتذہ کے مطالبات تسلیم کرلیے گئے