• Tuesday, 29 November 2022
روس نے جاپانی جاسوس سفارتکار کو ملک بدر کر دیا

روس نے جاپانی جاسوس سفارتکار کو ملک بدر کر دیا

ماسکو(نیا ٹائم ویب ڈیسک)روسی فیڈرل سکیورٹی سروس (ایف ایس بی) نے ولادی ووستوک میں جاپانی قونصلر کو حراست میں لے لیا۔ جبکہ موٹوکی تاٹسونوری نے محدود حساس معلومات خریدنے کی کوشش کرنے کا اعتراف بھی کیا۔

 

 روسی اداروں نے بروقت کارروائی کرتے ہوئے جاپانی سفارت کار کو حراست میں لیا اور اسے فوری ملک چھوڑنے کا حکم دیا گیا ہے۔ روسی سلامتی کے ادارے نے جاری اپنے بیان میں کہا ہے کہ جاپانی سفارت کار کو پیسے کے لیے، ایشیا پیسیفک خطے میں کسی دوسرے ملک کے ساتھ روس کے تعاون اور پرائموری خطے کی اقتصادی صورتحال پر مغربی پابندیوں کے اثرات کے بارے میں معلومات حاصل کرنے کے شبہ میں حراست میں لیا گیا ہے۔ بیان میں مزید کہا گیا ہے کہ سفارتکار کو ایسی سرگرمیوں کیلئے ناپسندیدہ شخصیت قرار دیا گیا ہے جو قونصلر اہلکار کی حیثیت سے مطابقت نہیں رکھتی اور روس کی سلامتی کیلئے نقصان دہ ہے۔

 

روسی فیڈرل سکیورٹی سروس نے جاپانی سفارت کار کی ایک ریسٹورنٹ میں ایک سیکرٹ ملاقات کی ویڈیو بھی  جاری کی ہے اور ساتھ ہی اسے حراست میں لیے جانے کے بعد سفارتکار سے پوچھ گچھ کی بھی ویڈیو جاری کی گئی ہے۔ دوسری جانب جاپانی قونصلر نے اعتراف جرم کیا ہے اور تسلیم کیا ہے کہ اس نے اپنی سرگرمیوں سے روسی قانون کی خلاف ورزی کی ہے جبکہ روس کی وزارت خارجہ نے اس واقعے پر جاپان کے وزیر مشیر کو بھی طلب کیا ہے جس میں مشن کو مطلع کیا گیا ہے کہ موٹوکی تاٹسونوری کو ناپسندیدہ شخصیت قرار دیا گیا ہے اور انہیں اگلے اڑتالیس  گھنٹوں کے اندر ہمارے ملک کو چھوڑنا ہوگا۔

 

 

دنیا کی آٹھویں بلند چوٹی سرکرکے واپس آنیوالی امریکی کوہ پیما کی لاش دوروزبعدمل گئی