بھارت میں تاریخی مسجد  کو مندر بنانے کی تیاریاں

بھارت میں تاریخی مسجد  کو مندر بنانے کی تیاریاں

وارانسی (نیا ٹائم ویب ڈیسک ) بھارت میں انتہا پسند ہندووں نے ایک اور مسجد کو مندر میں تبدیل کرنے کی تیاریاں کر لیں ، بھارتی شہر وارانسی کی تاریخی گیان واپی مسجد سے پہلے شیولنگ ملنے کا ڈرامہ رچا کر مسجد کے وضو خانے کو سر بمہر کروایا اور پھر پوجا پاٹ کیلئے عدالت میں کیس بھی دائر کر دیا ، ضلعی عدالت نے بھی انتہا پسند ہندووں کے خلاف مسلم وقف کی درخواست رد کر  کے سماعت  کا حکم دے دیا ۔

بھارتی میڈیا کے مطابق مغل بادشاہ اورنگزیب عالمگیر کے دور میں تعمیر کردہ گیان واپی مسجد  کی جگہ پر مندر قائم کرنے کی درخواست پر مسلم وقف بورڈ نے عدالت سے رجوع کیا تھا جس پر عدالت نے ان کی درخواست کو مسترد کرتے ہوئے کیس کو قابل سماعت قرار دے دیا ہے ۔ عدالت کیس پر 22 ستمبر کو سماعت کرے گی ۔

ضلعی عدالت نے اپنے فیصلے میں قرار دیا ہے کہ عبادت گاہوں کے حوالے سے بھارت کا قانون گیان واپی مسجد تنازع کی سماعت کی راہ میں رکاوٹ نہیں ہے ، اس عدالتی فیصلے کو انتہا پسند ہندو تنظیموں نے اپنی کامیابی سے تعبیر کیا ہے ، ان کا موقف ہے کہ عدالتی فیصلے مسجد کے مندر میں تبدیلی کیلئے پہلی سیڑھی ثابت ہو گا ۔

دوسری جانب عدالتی فیصلے پر گیان واپی مسجد کی انتظامیہ اور مسجد کمیٹی نے شدید تحفظات کا اظہار کرتے ہوئے معاملے پر ہائیکورٹ سے رجوع کرنے کا اعلان کیا ہے ۔

سماجی کارکن اور علی گڑھ مسلم یونیورسٹی سٹوڈنٹس یونین کے سابق رہنما سید مسعود الحسن نے عدالتی فیصلے پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے خدشہ ظاہر کیا ہے کہ گیان واپی مسجد کو بابر مسجد کی طرح شہید کر کے مندر میں تبدیل کر دیا جائے گا۔

واضح رہے ہندو انتہا پسندوں نے پہلے مسجد کے وضو خانے سے  شیولنگ ملنے کا ڈھونگ رچا کر اس میں پوجا پاٹ کرنے کی اجازت کیلئے پانچ ہندو خواتین نے ضلعی عدالت میں مقدمہ دائر کیا تھا ۔

 

دنیا کےامیرترین افراد میں امریکی شہری ایلون مسک کاپہلانمبر