• Friday, 30 September 2022
وزیراعظم کاامپورٹڈ کنسائنمنٹس کی کلیئرنس دینے سے انکار

وزیراعظم کاامپورٹڈ کنسائنمنٹس کی کلیئرنس دینے سے انکار

اسلام آباد(نیا ٹائم)وزیراعظم شہباز شریف نے بندرگاہوں پر پھنسے ہوئے کنسائنمنٹس کی ریلیز کی خصوصی اجازت کے پلان پر تحفظات کا اظہار کردیا۔

 

نجی ٹی وی کی رپورٹس کے وفاقی  کابینہ کے حالیہ اجلاس میں بندرگاہوں پر پھنسے کنسائنمنٹس کے اجرا میں درپیش رکاوٹیں دور کرنے کا معاملہ پیش کیا گیا تھا جس میں یہ تجویز دی گئی تھی ایک مرتبہ  خصوصی اجات دیکر ان کنسائنمنٹس کی ریلیز کا راستہ صاف کردیا جائے۔یہ تجویز اتحادی حکومت کیجانب سے بڑھتی ہوئی امپورٹس اور ڈالر کی قدر میں مسلسل اضافے کے پیش نظر متعدد اشیا کی درآمد پر پابندی لگائے جانے کے بعد سامنے آئی۔ وزیراعظم نے کہا کہ امپورٹس پر پابندی کے بعد ایک بار کنسائنمنٹس کی ریلیز کی خصوصی اجازت دینے پر غور نہیں کیا جاسکتا کیونکہ اس  سے غلط سگنل جائے گا اور معاملات مزید پیچیدگی کا شکار ہوجائیں گے۔

 

 اجلاس  کے دوران وفاقی کابینہ کے ایک رکن نے کہا کہ درآمدکنندگان کو کئی حقیقی مشکلات کا سامنا ہے کیونکہ بندرگاہوں  کنٹینر پھنسے ہونے کی بدولت  انہیں  ڈیمزچارجز کی مد میں بھاری ادائیگی کرنی پڑ رہی ہے  لیکن وزیراعظم  کا کہنا تھا  کہ اس معاملے میں کسی قسم کی کوئی رعایت نہیں دی جاسکتی اس لیے  پابندی کی خلاف ورزی پر جرمانہ عائد کیا جائے۔خاصی بحث کے بعدشہباز شریف اور دیگر کابینہ اراکین نے فیصلہ کیا کہ انیس مئی 2022 کو ایس آر او کے اجرا کے بعد سے پہلے2 ہفتوں کیلئے جرمانے کی شرح  پانچ فی صد اور ایس آر او کے اجرا کے پہلے 2 ہفتوں کے بعد  تیس جون 2022ء تک  پندرہ فی صد ہوگی۔

 

 

پرویز خٹک نے کارکنوں کو الیکشن تیاریوں کی ہدایت کردی