تمام سرکاری عمارتوں  کو سولر بجلی پر منتقل کرنے کا فیصلہ

تمام سرکاری عمارتوں  کو سولر بجلی پر منتقل کرنے کا فیصلہ

اسلام آباد (نیا ٹائم) ملک میں جاری بجلی کے بحران سے نمٹنے اور آئندہ ایسی بدترین صورتحال کے تدارک کیلئے ملک میں سرکاری عمارتوں کو سولر انرجی پر منتقل کرنے کا فیصلہ کر لیا گیا ۔

سولر انرجی ٹاسک فورس  کا اجلاس رہنما مسلم لیگ ن و سابق وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی کی صدارت میں ہوا جس میں وفاقی وزیر اطلاعات مریم اورنگزیب سمیت ٹاسک فورس کے دیگر اراکین شریک ہوئے ۔

اجلاس کے بعد جاری کئے گئے بیان میں وفاقی وزیر اطلاعات مریم اورنگزیب نے کہا کہ اجلاس میں  ملک میں جاری بجلی بحران سے نمٹنے اور سولر انرجی کی پیداوار میں اضافے کیلئے مختلف اقدامات کا جائزہ لیا گیا ۔ اجلاس  میں فیصلہ کیا گیا کہ سرکاری عمارتوں کو سولر انرجی پر منتقل کیا جائے ۔ انہوں نے اپنے بیان میں کہا کہ  بجلی پر سبسڈی والےعلاقوں میں سولر پلانٹس لگانےکا فیصلہ کیا گیاہے ۔

مریم اورنگزیب نے مزید کہا کہ اجلاس میں توانائی کی بچت اور گرین انرجی کے فروغ کیلئے پالیسی بنانے پر بھی غور کیا گیا ، سرکاری عمارتوں کو سولر انرجی پر منتقل کرنے کے حوالے سے فزیبلٹی رپورٹ تیار کرنے کی بھی ہدایت کر دی گئی ہے ۔

وفاقی وزیر اطلاعات نے مزید کہا کہ چھوٹے صارفین کو سولر انرجی پر منتقلی کیلئے سبسڈی منصوبے پر بھی غور کیا جا رہا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ سولر پیلز کے استعمال سے اضافی بجلی گرڈ سٹیشنز کو بھی فروخت کی جا سکے گی ۔ چار سے پانچ ہزار میگا واٹ کے منصوبوں پر جلد کام شروع کر دیا جائے گا ۔ انہوں نے کہا کہ سولر انرجی کا کاروبار کرنے والوں کو مراعات بھی دی جائیں گی ۔سولر انرجی ٹاک فورس وزیر اعظم کو اپنی سفارشات بھی پیش کرے گی ۔

 

ایم ایس سی کرنے کے باوجود نوجوان چائے بیچنے پر مجبور