بھارتی سپریم کورٹ نے امت مسلمہ کے دل جیت لیے

بھارتی سپریم کورٹ نے امت مسلمہ کے دل جیت لیے

نئی دہلی (نیا ٹائم ویب ڈیسک ) انڈین  سپریم کورٹ حضرت محمدﷺ سے متعلق گستاخانہ بیان پر بھارتیہ جنتا پارٹی  کی معطل رہنما نوپور شرما پر برس پڑی۔

 

انڈین  میڈیا کےمطابق  بھارتی سپریم کورٹ نے ایک کیس کی سماعت کے دوران ریمارکس دیے کہ ہندوستان  میں صورت حال کشیدہ ہونے کی ذمہ دار نوپور شرما ہیں اس لیے  انہیں اپنے بیان پر پوری قوم سے معافی مانگنی چاہیے۔انڈین  سپریم کورٹ نے مزید کہا کہ نوپور شرما نے اپنے بیان سے عوامی  جذبات کو ٹھیس پہنچائی ہے  اس لیے ملک میں اس وقت جو کچھ  بھی ہورہا ہے اسکی تمام تر ذمہ  دار صرف اکیلی نوپور شرما ہی  ہیں۔ سپریم کورٹ کے جسٹس سوریا کانت نے کہا کہ ہم نے دیکھا کہ اس بحث میں کس طرح نوپور شرما کو سراہا گیا  مگر جس انداز میں انہوں نے بیان دیا اور بعد میں انہوں نے یہ کہا کہ وہ وکیل ہیں تو یہ سب انتہائی شرم ناک ہے۔

 

انڈین  میڈیا کے مطابق بی جے پی کی سابق ترجمان نوپور شرما نے گستاخانہ بیان کے معاملے پر اپنے خلاف  پورے ملک  میں درج مقدمات کو دہلی منتقل کرنے کیلئے درخواست دائر کی تھی جس سے وہ  اب  پیچھے ہٹ چکی ہیں۔بھارتی سپریم کورٹ نے نوپور شرما کیجانب سے برابری کے سلوک کے بیان پر اظہار برہمی کیا اور انکے وکیل سے کہا کہ جب آپ نے دیگر لوگوں کیخلاف مقدمات درج کرائے تو انہیں فوری گرفتار کرلیا گیا مگر جب آپ کے اپنے خلاف مقدمات درج ہوئے تو کسی میں اتنی ہمت نہیں ہوئی کہ وہ آپکو ہاتھ  تک لگائے۔سپریم کورٹ کی جانب سے کہا گیا  کہ نوپور شرما کا بیان انکے ضدی اور مغرور کردار کو ظاہر کرتا ہے۔

 

 

پاک چین دوستی کو نقصان نہیں پہنچنے دیں گے،چینی وزارت خارجہ