بھارتی تاریخ کا سب سے بڑا فراڈ سامنے آ گیا

بھارتی تاریخ کا سب سے بڑا فراڈ سامنے آ گیا

نیو دہلی (نیا ٹائم ویب ڈیسک )بھارت کے بینکوں کے ساتھ ہونے والا بھارتی تاریخ کا سب سے بڑا فراڈ سامنے آ گیا ، بھارتی تحقیقاتی ادارے سینٹرل بیورو آف انوسٹی گیشن (سی بی آئی) کے مطابق 17 بینکوں کے ساتھ 4٫4 ارب ڈالرز کا فراڈ ہوا جس کے مزید تحقیقات بھی جاری ہیں ۔

تحقیقات کے دوران سی بی آئی نے 22 جون کو ممبئی میں 12 مقامات پر چھاپے مار کر مبینہ فراڈ کیس سے متعلق کئی اہم دستاویزات بھی برآمد کر لیں ۔ خبر رساں ادارے کے مطابق سی بی آئی کی طرف سے چھاپوں کے دوران دیوان ہاوسنگ فنانس لمیٹڈ اور 2 بھائیوں کپل اور دھیراج وادھوان کو بھی ہدف بنایا گیا تھا ۔

دونوں بھائی پہلے ہی اربوں ڈالرز کے فراڈ کے مختلف مقدمات میں ملوث ہونے کے باعث حراست میں ہیں ۔ سی بی آئی نے اگرچہ براہ راست ڈی ایچ ایف ایل کا نام تو نہیں لیا مگر یہ کہا جا رہا ہے کہ ایک کمپنی اور اس کے عہدیداروں نے 17 بینکوں پر مشتمل ایک کنسورشیم سے فراڈ کے ذریعے 346٫15 ارب بھارتی روپے ہتھیائے ہیں ۔

سی بی آئی حکام کی طرف سے جاری کئے گئے بیان کے مطابق یہ فراڈ بنیادی طور پر قرضوں سے متعلق تھا تاہم ملزموں نے جعلی کمپنیوں کا سہارا لیتے ہوئے بینکوں سے بڑے قرضے حاصل کئے ۔

سنٹرل بیورو آف انوسٹی گیشن کی رپورٹ کے مطابق ملزموں کی طرف سے ان فنڈز کو ذاتی مفادات کیلئے استعمال کیا گیا جبکہ مشتبہ ٹرانزیکشنز کو چھپانے کیلئے ریکارڈ میں بھی جعلسازی کی گئی ۔ ملزموں یا ڈی ایچ ایف ایل کی طرف سے تاحال اس بارے میں کوئی بھی بیان جاری نہیں کیا گیا ہے ۔ فراڈ ثابت ہونے کی صورت میں یہ بھارتی تاریخ کا بینکوں کے ساتھ ہونے والا سب سے برا فراڈ کیس ہو گا ۔

واضح رہے اس سے قبل اے بی جی شپ یارڈ کے خلاف بھی رواں برس فروری میں 3 ارب ڈالرز کا کیس درج ہوا تھا جو اس سے قبل بھارتی تاریخ کا سب سے بڑا فراڈ کیس قرار دیا گیا تھا ۔

 

ہماری امداد کریں ،افغان طالبان کی عالمی برادری سے اپیل