قومی ادارہ صحت نے کانگو وائرس پھیلنے کے پیش نظر ایڈوائری جاری کر دی

قومی ادارہ صحت نے کانگو وائرس پھیلنے کے پیش نظر ایڈوائری جاری کر دی

اسلام آباد (نیا ٹائم)قومی ادارہ صحت نے وفاقی ، صوبائی وزارت صحت اور متعلقہ محکموں کو عید الاضحیٰ پر کانگو وائرس کے پھیلاو کے پیش نظر ایڈوائزری جاری کر دی ۔

قومی ادارہ صحت کی طرف سے رواں برس میں 4 افراد میں کانگو وائرس کی تصدیق ہوئی ہے ، کانگو وائرس جانوروں کو لگنے والے چیچڑ کے کاٹنے ، متاثرہ جانور کے ذبح کےفوراً بعد خون یا ٹشوز کو ہاتھ لگانے سے بھی پھیلتا ہے ۔ کانگو وائرس سے شرح اموات 10 سے 40 فیصد ہوتی ہے ۔ ابھی تک اس بیماری کے خلاف کوئی بھی موثر ویکسین بھی دستیاب نہیں ہے ، رواں برس تصدیق ہونے والے دو مریضوں کا تعلق پنجاب جبکہ دو کا تعلق سندھ سے ہے ۔

قومی ادارہ صحت کی طرف سے جاری کی گئی ایڈوائزری کے مطابق عید کے موقع پر کانگو وائرس کیلئے احتیاطی تدابیر اختیار کی جائیں ۔ عیدالاضحیٰ پر جانوروں کے ساتھ براہ راست رابطہ بڑھنے کی وجہ سے کانگو وائرس کے متاثرہ جانوروں سے انسانوں میں منتقلی کے خدشات بھی زیادہ ہوتے ہیں ۔

محکمہ صحت کی ایڈوائزری کے مطابق کانگو وائرس کی ابتدائی علامات میں سر درد ، تیز بخار کے ساتھ کمر درد ، جوڑوں کا درد ، معدہ میں درد ، آنکھیں اور گلا سرخ ہونے کے ساتھ ساتھ دانوں سے خون کے قطرے نکلنا شامل ہیں ۔ کانگو سے بچاو کا واحد حل احتیاط ہے ۔

ایڈوائزری کے مطابق کانگو وائرس کی تصدیق کیلئے لیبارٹری ٹیسٹ کروائے جائیں ، عید الاضحیٰ کے دنوں میں جانوروں کے قریب جاتے ہوئے وائرس سے بچنے کیلئے پورے بازو والے ہلکے رنگ کے کپڑے پہنیں تاکہ چیچڑ فوری طور پر نظر آ سکیں اور انہیں جلد کپڑوں سے ہٹایا جا سکے ۔

قومی اداروں صحت کے مطابق بلوچستان کانگو وائرس سے سب سے زیادہ متاثر ہوا ہے ۔ عیدالاضحیٰ کا جانور خریدتے وقت تسلی کر لیں کہ کہیں جانور کانگو وائرس کا شکار تو نہیں ، کانگو سے متاثرہ افراد سے ملنے سے بھی احتیاط برتی جائے اور کانگو وائرس کے باعث جاں بحق ہونے والوں کی تدفین بھی احتیاط کے ساتھ کی جائے ۔

 

کورونا کے علاج کیلئے استعمال ہونے والے انجکشن کی قیمت کم ہو گئی