خاتون رکن کا مستعفی ہونا اسرائیلی پارلیمنٹ کیلئے دھچکا ثابت ہوا

خاتون رکن کا مستعفی ہونا اسرائیلی پارلیمنٹ کیلئے دھچکا ثابت ہوا

تل ابيب(نیا ٹائم ویب ڈیسک)اسرائیلی رکن پارلیمان  غیدہ ریناوی اپنے  عہدے سے مستعفی ہوگئیں جس کے بعد ایک دفعہ پھر اسرائیل میں جنرل الیکشنز کا میدان سجنے کا امکان بڑھ گیا ہے۔

 

بین الاقوامی  میڈیا کے مطابق اسرائیلی بائیں بازو کی پارٹی  میرٹس سے تعلق رکھنے والی خاتون رکن پارلیمان  غیدہ ریناوی نے مسجد اقصیٰ میں نمازیوں پر اسرائیلی فورسز کے تشدد اور خاتون صحافی شیرین ابوعاقلہ کی بہیمانہ موت پر افسوس  کا اظہارکرتے ہوئے اسمبلی رکنیت سے استعفیٰ دے دیا۔خاتون  رکن پارلیمنٹ نےاسرا ئیلی وزیراعظم نفتالی بیننٹ اوراسرا ئیلی وزیر خارجہ یائر لیپڈ کو بھیجے گئےلیٹر میں اپنے مستعفی ہونے سے متعلق بتایا اور حکومت میں دائیں بازو کی پارٹی  کی گرفت مضبوط ہونے اور مسلمانوں کےخلاف متعصبانہ کارروائیوں میں اضافے پر اظہارتشویش کیا۔ خاتون رکن پارلیمنٹ کے مستعفی ہونے سے اسرائیلی وزیراعظم  کی حکومت پارلیمان میں اپنی  اکثریت کھوچکی ہے۔

 

غیدہ ریناوی کے پارلیمانی رکنیت سے استعفیٰ دینے کے بعد اسرائیل کی موجودہ اتحادی حکومت کل 120 میں سے صرف 59 ارکان کی حمایت حاصل ہے۔واضح رہے کہ اسرائیلی وزیر خارجہ  نے کنیسیٹ کی رکن غیدہ ریناوی کوجاری سال  فروری میں شنگائی کے لیے اسرائیل کی پہلی خاتون قونصل جنرل تعینات کیا تھا جو خواتین کے لیے ایک اہم سنگ میل تھا۔اسرائیلی عرب خاتون پارلیمانی رکن کے مستعفی ہونے پر اسرائیلی صدرنیتن یاہو کی سربراہی میں اپوزیشن نے پارلیمان تحلیل کرنے کی تجویز پیش کی ہے جس پر آئندہ بدھ کو ووٹنگ کی جائے گی۔خیال رہے اس سے قبل  اسرائیل میں 3 سال میں چاردفعہ  عام الیکشنز کا انعقاد ہوچکا ہے ۔

 

 

66 سالہ پرانی کار کی قیمت نے نئی گاڑیوں کو پیچھے چھوڑ دیا