افغانستان میں انسانی حقوق سمیت 5 محکموں کو تحلیل کر دیا گیا

افغانستان میں انسانی حقوق سمیت 5 محکموں کو تحلیل کر دیا گیا

کابل (نیا ٹائم   ویب ڈیسک )افغانستان میں طالبان حکومت نے انسانی حقوق کمیشن سمیت 5 محکموں کو غیر ضروری قرار دیتے ہوئے تحلیل کر دیا ۔

برطانوی خبر رساں ادارے کے مطابق افغان حکام نے انسانی حقوق کمیشن سمیت 5 محکموں کو ختم کرنے کا حکم دیا ہے ۔ افغان حکومت کے نائب وزیر انعام اللہ سمنگانی نے وضاحت کی ہے کہ تحلیل کئے جانے والے محکمے غیر ضروری تھے اس لیے ان کو تحلیل کر دیا گیا ہے ۔ قومی بجٹ صرف فعال اور نتیجہ خیز محکموں کیلئے ہی ہے البتہ اگر ضرورت پڑی تو تحلیل شدہ محکموں کو  دوبارہ بحال کیا جا سکتا ہے ۔

خبر رساں ایجنسی کے مطابق تحلیل شدہ افغان محکموں میں انسانی حقوق کمیشن ، قومی مفاہمتی کونسل ، قومی سلامتی کونسل اور آئین کے نفاذ کیلئے آزاد کمیشن ولسی اور مشرانو جرگہ شامل تھے ۔

واضح رہے افغانستان کو رواں مالی سال میں بجٹ میں 50 کروڑ ڈالر سے زائد کے خسارے کا سامنا ہے ۔ ہفتے کے روز گزشتہ سال اگست میں حکومت سنبھالنے والے طالبان نے ملک کے پہلے سالانہ قومی بجٹ کا اعلان کرتے ہوئے افغانستان کے نائب وزیرا عظم عبدالسلام حنیف نے بتایا تھا کہ حکومت نے 231٫4 ارب افغانی اخراجات جبکہ 186٫7 ارب افغانی کی ملکی آمدن کی پیش گوئی کی ہے ۔

 

افغان خواتین میں خود کشی کا رجحان بڑھ گیا