یمن میں کئی برسوں بعد پہلی کمرشل پروازکی اڑان

یمن میں کئی برسوں بعد پہلی کمرشل پروازکی اڑان

یمن(نیاٹائم ویب ڈیسک)یمن  میں قیام امن کے بعد پہلی پرواز، یمنی درالحکومت صنعا سے چھ برس بعد پہلی پرواز نے اردن کے دارالحکومت عمان کیلئے اڑان بھری۔

 

اس پہلی پرواز کے  طیارے میں 126 مسافر سوار تھے، صنعا کا ہوائی اڈا 2016 سے کمرشل پراوزوں کے لیے بند تھا، اقوام متحدہ کی ثالثی سے 60 روزہ امن معاہدہ گزشتہ مہینے ہوا تھا۔ اسی کے ایک حصہ کے طور پر یہ پہلی کمرشل فلائٹ چلی ہے۔

 

اس طیارے پر مریض اور انکی فیملیز سوار تھے، جو علاج کی غرض سے بیرون ملک جا رہے تھے۔ معاہدے کے تحت افتتاحی پرواز 24 اپریل کو صنعا سے عمان کیلئے فکس تھی مگر یمن کی طرف سے ضروری اجازت نامے نہ ملنے کے بعد اسے منسوخ کرنا پڑ گیاتھا۔

 

خیال  رہے یمن میں رمضان کےآغاز سے امن معاہدے پر عمل درآمد جاری ہے، جس سے عوام کو بہت سہولت ملی ہے۔ 2015 سے سعودی عرب اور یمنی حوثیوں میں جنگ جاری ہے، جس سے سب سے برا اثر عام لوگوں  پر پڑا۔اقوام متحدہ کے اعداد و شمار کے مطابق اس جنگ میں ڈیڑھ لاکھ سے زیادہ  افراد ہلاک اور لاکھوں  لوگ بے گھر ہو چکے ہیں۔ یمنی تنازعے کو دنیا کا بدترین انسانی بحران بھی سمجھاجاتارہا ہے۔

 

طالبان نےجلد اچھی خبر سنانےکا اعلان کردیا