ڈالر کی اونچی اڑان روکنے کیلئے وزیر اعظم خود میدان میں اتر آئے

ڈالر کی اونچی اڑان روکنے کیلئے وزیر اعظم خود میدان میں اتر آئے

کراچی (نیا ٹائم )ملک میں جاری ڈالر کی اونچی اڑان روکنے اور قیمت مستحکم کرنے کیلئے وزیر اعظم شہباز شریف خود میدان میں اتر آئے ہیں ۔  وزیر اعظم نے فاریکس ایسوسی ایشن کے رہنماوں سے زوم کے ذریعے ملاقات کی ۔

فاریکس ایسوسی ایشن کے رہنماوں نے وزیر اعظم کو انٹر بینک میں ڈالر کی قیمت نیچے لانے سمیت آئی ایم ایف کو راضی کرنے ، امپورٹ بل کم کرنے سمیت لگژری اشیاء کی درآمد پر فوری طور پر پابندی لانے کا مشورہ دیا ۔ فاریکس ایسوسی ایشن کے رہنماوں نے وزیر اعظم کو شرح سود میں کمی لانےکا بھی مشورہ دیا ہے ۔

وزیر اعظم شہباز شرییف کے ساتھ ہونے والی زوم میٹنگ کے بعد فاریکس ایسوسی ایشن کے رہنما ملک بوستان کا کہنا تھا کہ ان کی وزیر اعظم شہباز شریف سے ہونے والی ملاقات مفید اور مثبت رہی ۔ وزیر اعظم کو شرح مبادلہ میں استحکام لانے کیلئے مختلف تجاویز دیں ۔ امید ہے کہ ڈالر کی قیمت اور شرح مبادلہ میں استحکام آ جائے گا ۔

انہوں نے مزید کہا کہ وزیر اعظم کو ڈالر کی قیمت نیچے لانے کیلئے انٹر بینک میں ڈالر کا ریٹ کم کرنے کی بھی تجویز دی ہے ۔ انٹر بینک میں اگر ڈالر ایک روپے نیچے آیا تو اوپن مارکیٹ میں دو روپے نیچے لائیں گے ۔ انہوں نے کہا کہ وزیر اعظم کو لگژری آئٹمز کی درآمد فوری طور پر بند کرنے کی بھی تجویز دی گئی ہے ۔

ملک بوستان نے مزید کہا کہ اس وقت ملک میں تین ارب ڈالر کی لگژری گاڑیاں درآمد ہو رہی ہیں اس لیے وزیر اعظم کو لگژری گاڑیوں کی درآمد پر کم از کم 6 ماہ کیلئے پابندی عائد کرنے کی تجویز دی گئی ہے ۔ ملک بوستان نے کہا کہ حکومت کو آگاہ کیا ہے کہ آئی ایم ایف کو راضی کرنا از حد ضروری ہے ۔ ماضی میں بھی 1998 ء میں جب ڈالر 44 روپے کا تھا اور بروقت آئی ایم ایف کو راضی نہ کرنے کے باعث بڑھ کر 68 روپے کا ہو گا تھا اس وقت زر مبادلہ کے ذخائر سرف 40 کروڑ ڈالر تھے ۔

 

اسٹاک ایکسچینج ڈگمگانے لگی