گندم خریداری کے اہداف کیوں پورے نہیں ہوئے، وزیراعظم ناراض ہوگئے

گندم خریداری کے اہداف کیوں پورے نہیں ہوئے، وزیراعظم ناراض ہوگئے

اسلام آباد(نیا ٹائم)وزیراعظم شہبازشریف نے گندم خریداری کے اہداف پورے حاصل نہ کرنے کیلئے صوبوں پر شدید برہمی کا اظہار کردیا ہے۔

 

وزیراعظم شہبازشریف کی زیرصدارت ملک میں گندم اورآٹے کی کمی کی صورتحال کا جائزہ لینے کے حوالے سے اجلاس ہوا جس میں وفاقی وزرا طارق بشیر چیمہ اور وزیراطلاعات مریم اورنگزیب کے علاوہ متعلقہ ڈویژنز اور محکموں کے افسران نے شرکت کی جبکہ صوبائی چیف سیکرٹریزویڈیو لنک کے ذریعے اجلاس میں شامل ہوئے۔

 

اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم شہبازشریف نے کہا کہ قوم کا ایک ایک پیسہ بچانا بطورحکومت ہماری ذمہ داری ہے، ملک میں وافر گندم دستیاب ہے، صوبے ذخیرہ اندوزی کے خلاف سخت کارروائی کریں۔وزیراعظم نے گندم خریداری کے ٹارگٹ پورے نہ کرنے پر صوبوں پر برہمی کا اظہارکرتے ہوئے کہا کہ عوام کو کسی صورت مشکلات سے دوچار نہیں ہونے دیں گے۔

 

ان کا کہنا تھا کہ وفاقی حکومت ہرصورت کم قیمت پرآٹا دے گی اور اس حوالے سے ہر ممکن تعاون فراہم کر رہی ہے، صوبے یکم جون تک گندم خریداری کے ٹارگٹ پورے کریں۔ وزیراعظم شہبازشریف نے کہا کہ وفاقی حکومت خیبرپختونخوا گورنمنٹ کی بھی ہرممکن ہیلپ کرے گی، غریب عوام کی خدمت اولین فریض سمجھتے ہیں۔

 

درآمد کی جانے والی گندم کی صوبوں میں میرٹ پرتقسیم کے لیے فوری کمیٹی قائم کرنے کے احکامات جاری کرتے ہوئے وزیراعظم کا کہنا تھا کہ سستی اور بہترین معیار کی گندم درآمد کوعملی جامہ پہنایا جائے۔ان کا کہنا تھا کہ تمام یوٹیلیٹی اسٹورز پرآٹے کی دس کلو قیمت 490 روپے مقرر کی جائے اور اوپن مارکیٹ میں بھی باقی صوبے اسی قیمت کو یقینی بنانے کے لیے ایکشن لے۔

 

سندھ میں پانی کا بحران کسانوں کیلئے پریشان کا باعث بن گیا