بھارت بھر میں مساجد کے سپیکرز کی آواز دھیمی کروا دی گئی

بھارت بھر میں مساجد کے سپیکرز کی آواز دھیمی کروا دی گئی

نئی دہلی (نیا ٹائم ویب ڈیسک ) بھارت میں انتہا پسند ہندووں نے اقلیتوں پر زندگی تنگ کر دی ، انتہا پسند ہندووں کی طرف سے مسلمانوں کے جذبات مجروح کرنے کا سلسلہ روزانہ کی بنیاد پر جاری ہے ،  حجاب پر پابندی کے بعد مساجد میں اذان کی آواز بھی دھیمی رکھنے کا حکم دے دیا گیا ۔

بھارتی میڈیا رپورٹس کے مطابق ملک بھر کی بڑی مساجد میں سے ایک کے خطیب اشفاق قاضی نے بتایا ہے کہ مغربی ریاست میں ہندو سیاستدانوں کے مطالبے پر 900 سے زائد مساجد میں اذان کے دوران سپیکرز کی آواز دھیمی رکھنے کا حکم دیا گیا ہے ، جس پر مساجد کی انتظامیہ نے بھی حامی بھر لی ہے ۔

قاضی اشفاق نے کہا کہ ہماری مساجد سے دی جانے والی اذانوں کی آواز پر سیاست کی جا رہی ہے تاہم ہم نہیں چاہتے کہ یہ مسئلہ مزید فسادات کو جنم دے ۔

واضح رہے بھارت میں ہندو انتہا پسند رہنما راج ٹھاکرے نے اپریل میں بھارت بھر کی مساجد میں اذانوں کے اوقات میں آواز دھیمی رکھنے کا مطالبہ کیا تھا ۔ان کا کہنا تھا کہ اگر ایسا نہ کیا گیا تو ان کی جماعت کے کارکن احتجاجاً مساجد کے باہر ہندو رسومات ادا کریں گے ۔

واضح رہے اس سے قبل بھارت میں اذان کا مسئلہ ریاست مہاراشٹر سے شروع ہو کر دیگر ریاستوں تک پھیل چکا ہے ۔

 

فرح گوگی کا ٹیکس ایڈوائزر ان  کے دفاع میں سامنے آگیا