ایس ایچ او کی تھانے میں اجتماعی زیادتی کا شکار لڑکی سے زیادتی

ایس ایچ او کی تھانے میں اجتماعی زیادتی کا شکار لڑکی سے زیادتی

 لکھنؤ(نیاٹائم)بھارت میں اجتماعی زیادتی کی شکار دلت لڑکی اپنی ماں کے ساتھ رپورٹ لکھوانے تھانے گئی تو وہاں بھی قانون کے رکھوالے تھانہ انچارج نے انصاف دینے کے بجائے زیادتی کر ڈالی۔

 

بھارتی میڈیا کے مطابق اترپردیش اسٹیٹ میں کم عمر دلت لڑکی کو چار افراد نے اجتماعی زیادتی کا ہدف بنایا جس پر وہ اپنی والدہ کے ساتھ رپورٹ درج کروانے تھانے گئی۔ مبینہ طور پر تھانہ ہیڈ نے ساتھی کے ہمراہ کم عمر لڑکی کو جنسی ہوس کا نشانہ بنایا۔مذکورہ لڑکی کو پولیس اسٹیشن میں جنسی زیادتی کا ہدف بنانے پر اس وقت تھانے میں موجود چھ سب انسپکٹرز، چھ ہیڈ کانسٹبلز، پانچ ویمن کانسٹبلز، دس کانسٹبلز اور دو ڈرائیورز کو بھی ایس ایچ او کے ہمراہ سسپنڈ کردیا گیا۔

 

ایس پی نکھیل پاٹھک کے مطابق جنسی زیادتی میں ملوث چھ افراد کی گرفتاری کیلئے چھاپہ مار ٹیمیں بنادی گئی ہیں اور تمام ملزمان کو جلد از جلد حراست میں لے لیا جائے گا۔معطل ایس ایچ او کے خلاف قانون کے مطابق شفاف کارروائی کی جائے گی ذمہ داران کے خلاف سختی سے نمٹا جائے گا۔

 

خیال رہے کہ بھارت میں نچلی ذات سے تعلق رکھنے والوں کی زندگی کو عذاب بنادیا گیا ہے ان کو تیسرے درجے کا شہری تصور کیا جاتا ہے، جان و مال اور عزت و آبرو ہروقت خطرے میں رہتی ہے جبکہ قانون بھی انصاف دلانے کے بجائے ظالم کا رول ادا کرتا ہے۔

 

گاڑی پر فائرنگ سے حاملہ خاتون زخمی