بھارت میں عبادتگاہوں سے لاوڈ سپیکر اتار دئیے گئے

بھارت میں عبادتگاہوں سے لاوڈ سپیکر اتار دئیے گئے

اتر پردیش (نیا ٹائم ویب ڈیسک ) بھارتی ریاست اتر پردیش میں ہائیکورٹ کے حکم پر عبادتگاہوں پر لگے 10 ہزار سے زائد غیر قانونی لاوڈ سپیکر ہٹا دئیے گئے ۔ 

بھارتی میڈیا کے مطابق عبادتگاہوں پر لگے لاوڈ سپیکرز کے حوالے سے مہاراشٹر میں تناو میں اضافے کے بعد اتر پردیش حکومت نے وزیر اعلیٰ یوگی آدتیہ ناتھ کی ہدایات اور کورٹ کے فیصلے پر عملدرآمد کرتے ہوئےریاست بھر میں 10 ہزار 9 سو سے زائد غیر قانونی لاوڈ سپیکر ہٹا دئیے گئے ۔ 

حکام کے مطابق سب سے زیادہ لاوڈ سپیکر لکھنو اور گورکھپور کے علاقوں سے ہٹائے گئے ہیں اس کے علاوہ ریاست بھر میں35 ہزار سے زائد لاوڈ سپیکر کو مقررہ آواز کی حد تک لانےکے اقدامات اٹھائے گئے ہیں ۔ 

بھارتی میڈیا کے مطابق 2018 میں بھی ایک حکومتی حکم نامہ جاری کیا گیا تھا جس کے مطابق عبادتگاہوں کے لاوڈ سپیکرز کی آواز کی حد کے اصول مقرر کئے گئے تھے ۔ 

رپورٹ کے مطابق وزیر اعلیٰ کے احکامات کو نافذ کرنے کے حوالے سے پوچھے جانے پر یوپی پولیس کے حکام نے کہا ہے کہ اصول یہ ہے کہ شور یا آواز احاطے سے باہر نہیں جانی چاہئے ۔ 

مثلاً اگر ایک احاطے میں پانچ لاوڈ سپیکرز ہیں تو تین لاوڈ سپیکرز کو ہٹایا جا سکتا ہے تاہم اس بات کو یقینی بنایا جا سکے کہ آواز صرف احاطے تک ہی مھدود رہے جبکہ لوگ اپنی معمول کی سرگرمیاں بھی آزادانہ طور پر کر سکیں ۔ 

حکام نے مزید کہا ہے کہ ریاست میں تمام مذہبی مقامات سے بلاتفریق لاوڈ سپیکرز ہٹائے جا رہے ہیں ۔

 
بھارت میں ہندی زبان کےمعاملےپرتنازع کھڑا ہوگیا