ثانیہ نشتر اور احسن اقبال ٹویٹرپرآمنےسامنے

ثانیہ نشتر اور احسن اقبال ٹویٹرپرآمنےسامنے

اسلا م آباد(نیاٹائم)عمران خان کے دور حکومت میں احساس پروگرام کی چیئر پرسن ڈاکٹر ثانیہ نشتر اور مسلم لیگ ن کے مرکزی رہنما ءاحسن اقبال کے مابین  نوک جھونک ہوئی ہے۔

 

مسلم لیگ ن کے احسن اقبال نے ٹویٹرپر ایک پوسٹ میں    تنقید کرتے  ہوئے لکھا کہ عمران نیازی حکومت کے دور میں پورے ملک میں فقط 19 لنگر خانے چلائےگئے ، ڈھنڈورا یوں پیٹا گیا جیسے کہ پورے ملک میں جال پھیلا دیا گیا ہو اور لطف کی بات یہ ہے کہ ان میں خوراک "سیلانی" (NGO) مہیاکرتی تھی، پرایا مال لیکن کریڈٹ اپنا، ساری حکومت سوشل میڈیا کے پراپیگنڈا کے پریشر پہ چل رہی تھی۔

 

اس کے بعد ثانیہ نشتر نے احسن اقبال کی ٹویٹ  کو ری ٹویٹ کرتےہوئے ردعمل کا اظہار کیا۔جس میں ان کا بتانا تھا کہ عمران خان کی خاص ہدایت پر پورے ملک میں 184لنگر کھولےگئے۔ثانیہ نشتر نے لنگر خانوں سے متعلق وضاحت پیش  کرتے ہوئے لکھا کہ تقریباََ 125پناہ گاہوں میں لنگر خانے، 19احساس لنگر خانے اور احساس کوئی بھوکا نہ سوئے کے 40ٹرک لنگر اوپن کئےگئے۔ثانیہ نشتر نے اپنی ٹویٹ میں مزید لکھا کہ ڈیلی تقریباَ ایک لاکھ سے زیادہ مزدور و مستحق افراد فائدہ حاصل کرتے ہیں۔

 

واضح رہے کہ عمران خان کے دورحکومت میں پناہ گاہوں اورلنگرخانوں پر کافی توجہ دی گئی تھی اور ملک بھر میں غریب لوگوں کےلئےلنگرخانےکھولےگئےتاکہ وہ کھانے کی سہولت سے مستفید ہو سکیں۔تاہم موجودہ حکومت اور اس وقت کی اپوزیشن جماعتوں کی جانب سے لنگر خانوں اور پناہ گاہوں کو لے کرعمران خان کی حکومت کو خوب تنقید کا نشانہ بنایا جاتا تھا۔

 

فیصلہ حق میں آئےتوانصاف،،خلاف آئےتوانصاف تارتار