فِٹ بِٹ واچ دل کی دھڑکن کا تعین کر سکے گی

فِٹ بِٹ واچ دل کی دھڑکن کا تعین کر سکے گی

کیلیفورنیا(نیا ٹائم)امریکی فوڈ اینڈ ڈرگ اتھارٹی (ایف ڈی اے) نے ایپل واچ سمیت کئی فِٹ بِٹ آلات کو دل کی دھڑکن ناپنے سے متعلق اقدامات کی منظوری دے دی ہے، جس کے بعد عام افراد اب فٹ بٹ واچ کے ذریعے دل کی دھڑکن معلوم کر سکیں گے۔

 

فٹ بٹ نے واچ میں 2020 میں یہ فیچر پیش کیا تھا، جس کو استعمال کرتے ہوئے ہم دل کی دھڑکن کو معلوم کر سکتے ہیں۔ کمپنی کی جانب سے آزمائشی طور پر اسے کئی افراد پر استعمال کیا گیا، جس کے نتیجے میں اس نے 98 فیصد درستگی کے ساتھ دل کی بے ترتیب دھڑکن کے کیسز کی شناخت کی، جس کی بدولت ان مریضوں کی جان بچانا ممکن ہو سکی۔ نتائج کو مدنظر رکھتے ہوئے ایپل واچ میں اس فیچر کو مزید بہتر بنایا گیا، جس کے بعد ایپل نے اپنے فٹ بٹ کے لیے کئی بار ایف ڈی اے سے منظوری کے لیے رابطہ کیا۔ دو ماہ قبل ایپل نے دوبارہ ایف ڈی اے سے درخواست کی تھی کہ وہ آزمائشی نتائج کی روشنی میں اسے عام افراد کے لیے استعمال کرنے کی منظوری دے۔

 

ٹیکنالوجی ماہرین کے مطابق اب بھی فٹ بٹ آلات روایتی آلات کے مقابلے میں زیادہ مؤثر نہیں ہیں، تاہم اس کے استعمال سے دل کی دھڑکن معلوم کرنے کے بعد خطرناک مواقع کی نشاندہی کر کے مریض کو فوری طبی امداد کے لیے ہسپتال بھیجا جا سکتا ہے۔ فٹ بٹ پہننے سے دل کے مریض آٹریئل فبلریشن کو فوری طور پر شناخت کر سکتے ہیں جس کے نتیجے میں دل کی دھڑکن معلوم کرتے ہوئے صحت کے مسائل پر مسلسل نظر رکھی جاسکتی ہے۔

 

نئی ٹیکنالوجی کو استعمال کرتے ہوئے فِٹ بِٹ دن میں کئی مرتبہ دل کی دھڑکن اور اس میں اتارچڑھاؤ کو معلوم کرنے کی صلاحیت رکھنے کے ساتھ خطرناک صورت حال میں دل کی کیفیت کی جانچ پڑتال کرتا ہے جسے آرٹیریئل فِبلریشن کہا جاتا ہے۔ اس کیفیت کے باعث ایک طرف تو مریض کو فالج کے مرض کا خطرہ ہوتا ہے تو دوسری جانب یہ خطرات موت کا باعث بھی بن سکتے ہیں۔ فِٹ بٹ سافٹ ویئر کی بدولت جہاں مریض خود بھی اپنی دلی کیفیات جان سکتے ہیں وہیں اس آلے کو پس منظر میں رکھ کر بھی دل کی کیفیت اور دھڑکن کو معلوم کیا جا سکتا ہے۔ فٹ بٹ کا کہنا ہے کہ ایف ڈی اے کی جانب سے منظوری کے بعد اس واچ کو سب سے پہلے امریکی عوام کے لیے پیش کیا جائے گا۔

 

ایک سم پر متعدد نمبرز چلانا ممکن ہو سکے گا