ہم جنس پرستوں پر پابندی کا نیا قانون

ہم جنس پرستوں پر پابندی کا نیا قانون

پیرس(نیا ٹائم ویب ڈیسک)  فرانس میں ایک نیا قانون نافذ ہوا ہے جس کے تحت ہم جنس پرستوں کی جنسی شناخت یا رجحانات کو روٹین کے مطابق نارمل کرنے کی تھیراپی پر پابندی عائد کردی گئی ہے۔

 

بین الاقوامی میڈیا کے مطابق فرانس حکومت کی جانب سے ہم جنس پرستوں کی تھیراپی کرنے کی کوشش میں 2 سال قید اور 34،000 ڈالرز جرمانے کی سزا مقرر کر دی گئ ہے۔ہم جنس پرستوں کی سوچ کو تبدیل کرنے کے لیے تھیراپی سنٹرز کو بھی بند کرنے کا حکم دے دیا گیا۔

 

قانون میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ اگر تھیراپی کسی نوجوان یا ایسے شخص پر کی جائے گی جو جسمانی یا ذہنی طور پر کمزور ہوگا تو اس کی سزا 3 سال قید اور اس پر 50،000 ڈالرز جرمانہ عائد کر دیا جائے گا۔

 

مذکورہ قانون کو فرانس کی نیشنل اسمبلی میں اکثریتی ووٹ سے منظور کرنے کے بعد نافذ العمل کیا گیا ہے۔ اس موقع پر فرانسیسی وزیر برائے مساوات اور تنوع الیزبتھ مورینو نے ہم جنس پرستوں کی تھیراپی کو وحشیانہ عمل قرار دے دیا جب کہ صدر ایمانوئل میکرون نے بھی نئے قانون کو خوب سراہا۔یاد رہے کہ امریکا میں بھی کئی ریاستوں میں ایسا ہی قانون نافذ کیا گیا ہے۔

 

پی ایس ایل 7 میں کراچی کنگز کے کونسے اہم کھلاڑی کی شرکت مشکوک