ملکی سالمیت سے ٹکرانے والوں سے ٹکرائیں گے ، شیخ رشید

ملکی سالمیت سے ٹکرانے والوں سے ٹکرائیں گے ، شیخ رشید

اسلام آباد ( نیا ٹائم ) وزیر داخلہ شیخ رشید نے کہا ہے تحریک طالبان پاکستان کی بات سننے کے لیے تیار ہیں تاہم ملکی سالمیت سے ٹکرانے والوں سے ٹکرائیں گے ۔

سینیٹ میں اظہار خیال کرتے ہوئے وزیر داخلہ نے کہا 15 اگست سے اب تک دہشت گردی کی وارداتوں میں اضافہ ہوا ہے ۔ بھارتی خفیہ ایجنسی را دہشت گردی کیلئے پاکستانی جرائم پیشہ افراد کو استعمال کر رہی ہے ۔ اب تک راولپنڈی اسلام آباد میں 10 اہلکاروں کو ٹارگٹ کیا گیا ، 2 دہشت گردی بھی پکڑے گئے ۔ داسو اور گوادر واقعات کے ملزموں کو بھی گرفتار کئے تاہم انہیں سزائیں عدالتوں نے سنانا ہیں ۔ دہشت گردی کے خلاف ہمارا ایک بیانیہ ہونا چاہئے ۔ خوشی ہے کہ اپوزیشن بنچز سے بھی دہشت گردی کی مذمت کی جاتی ہے ۔ دہشت گردوں کے خلاف ہم یکجا ہیں ۔

وزیر داخلہ نے مزید کہا بھارت نہیں چاہتا پاکستان اور طالبان کے درمیان تعلقات بہتر ہوں ۔ اب دہشت گردوں سے کسی قسم کے مذاکرات نہیں ہو رہے تاہم اب بھی ہم تحریک طالبان پاکستان کی کی بات سننے کو تیار ہیں لیکن ملکی سالمیت سے ٹکرانے والوں کو معاف نہیں کریں گے ۔ افواج پاکستان دہشت گردی سے نبرد آزما ہیں ۔ جہاں بھی کوئی سر اٹھانے کی کوشش کرتا ہے وہاں کارروائی کی جاتی ہے ۔ ملکی سالمیت اور خود مختاری پر حرف نہیں آنے دیں گے ۔

شیخ رشید نے کہا میرے بارے میں اپوزیشن جو مرضی کہتی رہے ، سیاست میں سب چلتا ہے ۔ ہمارا کام انہیں سمجھانا ہے ، دہشت گرد کسی کا نہیں ہو سکتا ۔ محترمہ بینظیر کی بھی منت کی کہ وہ راولپنڈی میں جلسہ نہ کریں ۔ مولانا فضل الرحمن اور مجھ پر بھی حملے ہو چکے ہیں ۔ انہوں نے اپوزیشن کو مخاطب کرتے ہوئے کہا میں انہیں کورونا کے خطرے کا نہیں کہتا البتہ 23 مارچ کو او آئی سی کانفرنس ہے جس میں پوری دنیا سے 100 سے زائد ممالک کے سربراہان آ رہے ہیں جس کے باعث راستے بند ہوں گے ۔ فون سروس بھی بند ہو گی ، جس کے باعث ٹی وی چینلز پر شام کے وقت اپوزیشن کا شو کیسے چلے گا ۔ انہوں نے کہا میں خوفزدہ نہیں یہ شوق سے اسلام آباد آئیں لیکن گزارش ہے کہ 23 کے بجائے 27 مارچ کو اسلام آباد آئیں ۔

 

ن لیگ سیاسی جماعت کے بجائے مافیا کی طرح کام کر رہی ، عمران خان