کرد فورسز اور داعش کے درمیان شدید جنگ ، 120 افراد مارے گئے

کرد فورسز اور داعش کے درمیان شدید جنگ ، 120 افراد مارے گئے

ہساکے ( نیا ٹائم ویب ڈیسک ) شام میں کرد فورسز کے زیر انتظام جیل پر جمعرات کو ہونے والے حملے کے بعد سے کرد اہلکاروں اور داعش کے درمیان شید جنگ جاری ہے جس میں اب تک 120 سے زائد افراد ہلاک ہو چکے ہیں ۔ ہلاک ہونے والوں میں 7 عام شہری بھی شامل ہیں ۔

انسانی حقوق کی نگران تنظیم ( سیرین آبزرویٹری فار ہیومن رائٹس ) کے مطابق داعش کے 100 سے  زائد جنگجوؤں نے جیل میں قید اپنے ساتھیوں کو چھڑوانے کے لیے جیل پر حملہ کیا ۔ ذرائع کے مطابق جیل میں داعش کے 3500 کے قریب کارکنان قید تھے ۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ شام میں 3 سال قبل داعش کی قائم کردہ خود ساختہ اسلامی خلافت کے خاتمے کے بعد سے داعش کی جانب سے یہ اب تک کی سب سے بڑی اور منظم کارروائی تھی ۔

جیل پر حملے کے دوران داعش کے جنگجوؤں نے جیل سے اسلحہ بھی قبضے میں لے لیا ۔ امریکی حمایت یافتہ کرد فورسز نے داعش کے ٹھکانوں کو نشانہ بنایا جس کے نتیجے میں اب تک 77 داعش کارکنان اور 39 کرد اہلکار بھی ہلاک ہو چکے ہیں جبکہ جھڑپوں میں 7 عام شہری بھی مارے گئے ۔

جھڑپوں کے مقام کے قریب ہی موجود عالمی نشریاتی ادارے کے نمائندے کے مطابق شدید جھڑپوں کے دوران گولہ باری کی آوازیں بھی سنائی دی جا رہی ہیں جبکہ کرد فورسز کی جانب سے لاؤڈ سپیکر کے ذریعے مقامی شہریوں کو فوری طور پر آبادی سے انخلا کی وارننگ بھی دی جا رہی ہے ۔

 

امریکی شہری طالبان کےہاتھوں مشرف بہ اسلام ہو گیا