حزب اللہ  کے خلاف امریکا نے پابندیوں کا دائرہ وسیع کردیا

حزب اللہ کے خلاف امریکا نے پابندیوں کا دائرہ وسیع کردیا

 واشنگٹن(نیا ٹائم ویب ڈیسک)امریکا کی جانب سے لبنان کی عسکری و سیاسی تنظیم حزب اللہ سے منسلک ہونے کے الزام میں پابندیوں کا دائرہ وسیع کر دیا گیا ہے۔

 

بین الاقوامی میڈیا رپورٹس کے مطابق امریکا نے 10 اقتصادی اداروں پرحزب اللہ کی معاونت پرپابندیاں لگا دی ہے۔ امریکا کی جانب سے 3 لبنانی اور10 اقتصادی اداروں پرپابندیاں لگا دی گئی ہیں۔

 

یہ پابندیاں محکمہ خزانہ کی جانب سے لگائی گئی ہیں اوراس ضمن میں ڈیپارٹمنٹ نے باقاعدہ بیان جاری کیا ہے۔ محکمہ کی تازہ ترین پابندیوں کا ہدف عادل دیاب، عدنان ایاد اورجہاد عدنان ایاد جو کہ لبنانی شہری ہیں، اور امریکہ نے منگل کو 3 افراد پر پابندیوں کا اعلان کیا ہے۔محکمہ خزانہ نے کہا تھا کہ وہ 3 لبنانی تاجروں پر پابندی عائد کرنے جارہا ہے۔محکمہ خزانہ کی جانب سے ویب سائٹ پرجاری بیان میں کہا گیا ہے کہ دہشت گردی سے متعلق عالمی پابندیوں کے تحت نئی پابندیاں عائد کی جا رہی ہیں۔

 

یاد رہے کہ ایک طرف لبنانی عسکریت تنظیم پرعالمی پابندیاں لگائی جارہی ہیں تو دوسری طرف روس کے صدر ولادیمیر پیوٹن حزب اللہ کو تسلیم کرنے کا فیصلہ کر چکے ہیں۔ صدر پیوٹن کی جانب سے حزب اللہ کو لبنان میں اہم سیاسی ‏قوت اور اس کے سیاسی کردارکو اہم قراردیا گیا ہے۔ انہوں نے کہا ہے کہ حزب اللہ سے متعلق تمام ممالک کی اپنی رائے وابستہ ہے اورہمارا نقطہ نظراس سے مختلف ہے، ہمارے نظریات کے ‏مطابق حزب اللہ لبنان میں اہم سیاسی طاقت رکھتا ہے۔

 

امریکی صدر اپنی نااہلی اور ناکامی پر بھڑک اٹھے