انڈین  آرمی چیف اور وزیر داخلہ کوگرفتارکیاجائے

انڈین آرمی چیف اور وزیر داخلہ کوگرفتارکیاجائے

لندن(نیاٹائم ویب ڈیسک)برطانوی لاء فرم نے مقبوضہ کشمیر میں جنگی جرائم کے ارتکاب میں براہ راست شریک  ہونے پر انڈین  وزیر داخلہ امیت شاہ اور بھارتی آرمی  کے سربراہ جنرل منوج مکند نروانےکی گرفتاری کا مطالبہ کردیاہے۔

 

میڈیارپورٹس کے مطابق لاء فرم سٹاک وائٹ کی طرف سے برطانیہ کی میٹروپولیٹن پولیس کے جنگی جرائم یونٹ میں درخواست دی  گئی ہے جس میں لکھا گیا ہےکہ  انڈین  وزیر داخلہ امیت شاہ کی قیادت میں بھارتی فوجی مقبوضہ کشمیر میں  انسانی حقوق کے کارکنوں، جرنلسٹس اور عام عوام پر تشدد، ان کے اغواء اور قتل کے ذمہ دار ہیں۔

 

لاء فرم کی رپورٹ 2020 اور 2021 کے وسط میں  لی گئیں جو 2 ہزار سے زیادہ شہادتوں پر بنائی گئی ہے۔رپورٹ کے مطابق قابض بھارتی آرمی نے کشمیریوں پر ظلم کے پہاڑ توڑے، مقبوضہ کشمیر میں سماجی رہنماؤں  ، جرنلسٹس اور عام عوام پر تشدد، ان کے اغوا اور قتل کے پیچھے انڈین آرمی چیف اور وزیر داخلہ شریک  ہیں، درخواست میں انڈین گورنمنٹ  کے سینیئر افسروں کوبھی نامزد کیاگیاہے۔

 

لندن پولیس کو یہ درخواست "عالمی دائرہ اختیار" کے قانون کے تحت دی گئی ہے جو ممالک کو دنیا میں کہیں بھی انسانیت کیخلاف جرائم کے مرتکب ہونےوالے افراد کے خلاف مقدمہ چلانے کا اختیار دیتا ہے۔لاء فرم کے انٹرنیشنل  قانون کے ڈائریکٹر ہاکان کاموز  نے امید ظاہر کی ہے کہ  برٹش پولیس رپورٹ پر انویسٹی گیشن کا آغازکرے گی  اور ان افراد کو  برطانیہ آمد پر حراست میں لیا جائے گا۔

 

بین الاقوامی لاء فرم سٹوک وائٹ کے کہنا ہے کہ یہ پہلی مرتبہ ہوا ہےکہ مقبوضہ کشمیر میں مبینہ جنگی جرائم پر انڈین حکام کے خلاف بیرون ملک قانونی ایکشن  کا مطالبہ کیا گیا ہے۔

 

امریکی عدالت نے ٹرمپ کو لال جھنڈی دکھا دی