جل پری نما بچے کی پیدائش کے چرچے

جل پری نما بچے کی پیدائش کے چرچے

کراچی (نیاٹائم ویب ڈیسک) کراچی کے نیشنل انسٹیٹیوٹ آف چائلڈ ہیلتھ ہسپتال میں جل پری نمابچے کی پیدائش ہوئی ہے، ڈاکٹروں کےمطابق بچے کی دونوں ٹانگیں جل پری کی طرح آپس میں جڑی ہوئی ہیں، طبی ماہرین کاکہناہےکی اس نوعیت کے بچے کا علاج کافی مشکل ہے۔

 

پوری دنیامیں جل پری کےقصے اورکہانیاں زبان زدعام ہیں ، کراچی انسٹیٹیوٹ آف چائلڈ ہیلتھ ہسپتال میں حیرت انگیز طورپرایک جل پری نما شکل میں بچے کی پیدائش ہوئی ہے۔ہسپتال انتظامیہ کےمطابق جل پری نما شکل میں بچے کی پیدائش اندرون سندھ سے تعلق رکھنے والے جوڑے کے ہاں ہوئی ہے۔

 

طبی ماہرین کا کہنا ہےکہ بچے کا جل پری نما پیدائش کا کیس سیرینو میلیا نامی بیماری ہے، طب کی دنیامیں اس بیماری کو مرمیڈ سینڈروم کانام دیا جاتا ہے۔اس بیماری سے متاثرہ بچوں میں اوپر کا جسم نارمل انسان کی طرح مگر نچلا حصہ مچھلی کی مشاہبت رکھتاہے۔

 

جل پری نماشکل بچے کاطبی معائنہ کرنے والے طبی ماہر ڈاکٹرمحبوب کہتے ہیں کہ پیدا ہونے والے بچے کا مثانہ نہیں ہے، جگر و دیگر اعضاء کا سائز بھی نارمل بچوں کے مقابلے میں چھوٹا ہے، ب سیرینو میلیا نامی یماری کے باعث بچے کی دونوں ٹانگیں باہمی جڑی ہوئی ہیں جو مچھلی کی دم کی طرح دکھائی دیتی ہیں۔عموماً اس حالت کے بچےدنیامیں بہت کم پیدا ہوتے ہیں، پوری دنیا میں اب تک اس طرح کے تین سوسے زائد کیس سامنے آئے ہیں۔

 

طبی ماہرین کہتے ہیں کہ یہ مرض ایک لاکھ حاملہ خواتین میں سے کسی ایک کے پیٹ میں موجود بچے کو لاحق ہوتا ہے،عموما اس طرح کے مرض میں مبتلامتاثرہ بچوں کا چند گھنٹوں میں ہی انتقال ہوجاتا ہے۔

 

باغوں کاشہرجگمگائے گا،حکومت نے بڑافیصلہ کرلیا