خوشخبری،بانس کی کاشت زرِمبادلہ کمانے کا ذریعہ

خوشخبری،بانس کی کاشت زرِمبادلہ کمانے کا ذریعہ

فیصل آباد(نیا ٹائم ویب ڈیسک) پاکستان میں بانس کی کاشت کو فروغ دے کر جہاں گھریلو لکڑی، فرنیچر، دستکاری، کوئلہ، سرکہ، کپڑا اور کاغذ کی ضروریات پوری کی جا سکتی ہیں، وہیں بانس کی کونپلیں بھی بطور خوراک استعمال کی جا سکتی ہیں۔ نیز بانس کی اضافی پیداوار اور اس سے تیار کی جانے والی مصنوعات کو برآمد کرکے ملک سالانہ اربوں ڈالرز کا قیمتی زر مبادلہ بھی کما سکتاہے۔

 

محکمہ زراعت فیصل آباد کے ڈپٹی ڈائریکٹر چوہدری خالد محمود کی جانب سے میڈیا کو آگاہ کیا گیا ہے کہ چین نے بانس کی 540سے زائد اقسام تیار کر لی ہیں اس لیے پاکستان چین کی بانس کی ٹیکنالوجی میں خصوصی پیش رفت سے استفادہ حاصل کر کے بہتر پیداوار حاصل کرنے کے قابل ہو سکتاہے۔انہوں نے مزید کہا کہ لاکھوں چینی باشندے بانس کی ٹہنیاں پروسیس کر کے بیرون ملک بھیج رہے ہیں جس سے انہیں بھاری زرمبادلہ حاصل ہو رہا ہے۔

 

انہوں نے کہا کہ پاکستان میں بانس کی پیداوار کو فروغ دے کر جہاں جنگلات کی کمی ہے وہاں نہ صرف زمیندار اپنی آمدنی میں اضافہ کر سکتے ہیں بلکہ روزگارکے نئے مواقع بھی پیداکیےجاسکتے ہیں۔انہوں نے بتایا کہ چین میں بانس کی ایک قسم اوسطا ً4سے 5لاکھ روپے فی ایکڑ سالانہ آمدنی مہیا کرتی ہے۔انہوں نےکہا کہ کئی سال قبل پاکستان میں بانس کی پیداوار پر خصوصی توجہ دی جاتی تھی لیکن بعد میں اسے نظراندازکردیا گیا لیکن اب اس طرف سنجیدگی سے توجہ دی جا رہی ہے تاکہ بانس کی پیداوار بڑھانے کی کوششیں نتیجہ خیز ثابت ہوں۔

 

واضح رہے کہ سیکرٹری جنگلات خیبرپختونخوا کی عدم حاضری پر برہمی کا اظہار کرتے ہوئے چیف جسٹس نے کہا کہ کیوں نہ خیبرپختونخوا کےسیکرٹری جنگلات کے وارنٹ جاری کر دیے جائیں۔

 

محکمہ جنگلات کےحکام نے عدالت کو آگاہ کیا کہ خیبرپختونخوا میں 19 کروڑ درخت لگائے گئے ہیں۔جسٹس اعجازالاحسن نے ریمارکس دیئے کہ اگر 19 کروڑ درخت لگائے جائیں تو پورا خیبرپختونخوا ہرا بھرا ہو جائے۔ جب کہ چیف جسٹس نے کہا کہ پورا پشاور شہر اُجڑا بیابان بنا ہوا ہے۔جسٹس اعجاز الاحسن نے استفسار کیا کہ 19 کروڑ درختوں کےلئے پودے کہاں سے خریدے گئے ہیں ؟جس پر محکمہ جنگلات کے پی کے حکام نے بتایا کہ زمین پر بیج پھینک کر ان سے درخت اُگائے جاتے ہیں۔جسٹس اعجاز الاحسن نےریمارکس دیتے ہوئے کہا کہ زمین پر بیج پھینک کر سارے کا سارا کام اللہ کے سپرد کر دیاگیاہے۔

 

170 ملازمین کی نوکری سےچھٹی، وجہ کیا بنی؟