امریکی وزارت خارجہ کے حکام کے فون ہیک کے پیچھے کس کاہاتھ

امریکی وزارت خارجہ کے حکام کے فون ہیک کے پیچھے کس کاہاتھ

 

لندن(نیا ٹائم ویب ڈیسک) اسرائیلی جاسوسی ادارے NSO نےامریکی وزارت خارجہ کے حکام کے تمام فونز ہیک کرلیئے۔امریکی صدر جو بائیڈن کی حکومت کےایک سینیرعہدیدار کے مطابق بیرون ملک کام کرنے والے امریکی سفارتکاروں کو لاحق خطرات کی وجہ سے امریکی حکومت NSO جیسی کمپنیوں کے خلاف قانونی کارروائی کر رہی ہے اور جاسوسی پر نئی بحث چھڑ گئی ہے۔

برطانوی نیوز ایجنسی رائٹرز نے اس معاملے سے واقف چار نامعلوم ذرائع کے حوالے سے اطلاع دی ہے کہ اسرائیلی جاسوسی فرم NSO گروپ کے اسپائی ویئر استعمال کرتے ہوئے امریکی محکمہ خارجہ کے کم از کم 9 حکام کے فونز ہیک کیے جا چکے ہیں۔امریکی حکام پر یہ حملے اسرائیلی ٹیکنالوجی کے استعمال سے امریکہ کونشانہ بنانے کی سب سے بڑی سازشیں ہیں۔ اس سے پہلے امریکی عہدیداروں سمیت متعدد ممکنہ اہداف میڈیامیں سامنے آئے تھے مگر اس موقع پریہ واضح نہیں ہو سکا تھا کہ ہیکنگ کی تمام تر کارروائیاں کامیاب ہوئی بھی تھیں یا نہیں۔

رپورٹ کے مطابق ہیکنگ میں یوگنڈا میں مقیم امریکی اہلکاروں کے آئی فونز کو نشانہ بنایا گیا جو ملک سے متعلق مسائل پر کام کر رہے تھے۔ تاہم ابھی تک اس بات کا تعین نہیں ہو سکا کہ سائبر حملوں میں کون ملوث ہے۔

رائٹرز کی جانب سے یہ انکشاف جمعرات کوکیا گیا تھا تاہم اس کی تصدیق آج امریکی نشریاتی ادارے واشنگٹن پوسٹ نے بھی کردی ہے۔ اطلاع دی گئی ہے کہ درحقیقت گیارہ امریکی حکام کے ایپل آئی فونز کو ہیک کیاجاچکاہے۔

خیال رہے کہ اسرائیلی فرم نے رواں برس کے آغاز میں اس وقت عالمی سطح پر غم و غصے کو جنم دیا تھا جب انٹر نیشنل میڈیا آؤٹ لیٹس کی ایک انکوائری میں انکشاف ہوا ہے کہ اس کے اسپائی ویئر کو سیکیورٹی فورسز اور آمرانہ حکومتیں دیگر ممالک میں صحافیوں اور کارکنوں کے خلاف استعمال کرتی ہیں۔

 

عدالتیں آزاد ہیں اورآزاد ہی رہیں گی