• Thursday, 27 January 2022
بھارتی سفارتکار کی دفتر خارجہ طلبی

بھارتی سفارتکار کی دفتر خارجہ طلبی

اسلام آباد ( نیا ٹائم ) سکھوں کے مذہبی مقام گوردوارہ کرتار پور صاحب کے احاطے میں فوٹو شوٹ سے متعلق بھارتی پراپیگنڈے پر دفتر خارجہ میں بھارتی سفیر کو طلب کر لیا گیا ۔ ترجمان دفتر خارجہ کی جانب سے جاری کئے گئے بیان کے مطابق  بھارتی سفارتکار کو گوردوارے میں فوٹو شوٹ کے حوالے سے ہونے والے بھارتی پراپیگنڈے کے حوالے سے پاکستان کے تحفظات سے آگاہ کیا گیا ۔

ترجمان دفتر خارجہ نے کہا کہ پاکستان میں تمام اقلیتی برادری کے حقوق اور ان کے مذہبی مقامات کے تقدس کا پورا خیال رکھا جاتا ہے ۔ بھارتی میڈیا اور حکومت کی جانب سے گوردوارے میں پیش آنے والے معاملے پر منفی اور حقائق سے ہٹ کر پراپیگنڈا کیا جا رہا ہے جو کہ انتہائی مضحکہ خیز ہے ۔ ترجمان دفتر خارجہ نے مزید کہا کہ اقلیتوں کے حقوق سلب کرنے اور ان پر زندگیاں تنگ کر نے پر دنیا بھر میں بدنام ترین ملک بھارت کو اقلیتوں کے حقوق کے حوالے سے بات کرنا زیب نہیں دیتا ۔

واضح رہے چند روز قبل گوردوارہ کرتار پور صاحب کے احاطے میں فوٹو شوٹ کروایا گیا تھا جس پر وزیر اعلیٰ پنجاب عثمان بزدار نے سکھوں کے مقدس مذہبی مقام کے احاطے میں ماڈلنگ کے واقعہ کا سخت نوٹس لیا تھا جبکہ وفاقی وزیر اطلاعات و نشریات فواد چوہدری نے بھی واقعے کو شدید تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے ڈریس ڈیزائنر اور ماڈل سے سکھ برادری سے معافی مانگنے کا بھی مطالبہ کیا تھا ۔

جس کے بعد ماڈل صالحہ امتیاز نے اپنے انسٹا گرام اکاؤنٹ پر اپنی پوسٹ میں لکھا کہ میں نے ایک تصویر پوسٹ کی جو فوٹو شوٹ کا حصہ نہیں تھی ، میں صرف تاریخ جاننے اور سکھ برادری کے متعلق معلومات حاصل کرنے کرتار پور گئی تھی ۔

انہوں نے لکھا تھا کہ میرا مقصد کسی کے بھی مذہبی جذبات مجروح کرنا ہرگز نہیں تھا ، تاہم اگر انجانے میں کسی کو دکھ پہنچا ہو یا کسی کو لگتا ہے میں نے ثقافت یا مذہب کا احترام نہیں کیا تو اس کے لیے میں معافی مانگتی ہوں ۔

 

کورونا خطرات ، پاکستان نے 7 ممالک پر سفری پابندیاں عائد  کر دیں