• Saturday, 04 December 2021
بھارتی کرکٹ بورڈ میں تنازع کی وجوہات کیا ہیں؟

بھارتی کرکٹ بورڈ میں تنازع کی وجوہات کیا ہیں؟

 

‎نئی دہلی(نیا ٹائم ویب ڈیسک) بھارتی کرکٹ کنٹرول بورڈ اپنے کھلاڑیوں کو فٹ اور صحتمند رکھنے کی کوشش میں نئے مسئلے میں پھنس گیا۔

‎بھارتی کرکٹ کنٹرول بورڈ کی جانب سے اپنی کرکٹ ٹیم کے کھلاڑیوں کو صحت مند اور فٹ رکھنے کے لیے دو روزہ ڈائٹ پلان منظور کیا گیا جس کے تحت کھلاڑیوں کو حرام گوشت کھانے سے پرہیز کرنے اورصرف حلال گوشت کھانے کا پابند بنایا گیا ہے۔

‎بھارتی کرکٹ ٹیم کی ٹی 20 ورلڈ کپ میں انتہائی ناقص کارکردگی کو پیش نظررکھتے ہوئے کرکٹ کنٹرول بورڈ کی طرف سے جہاں کوچ کی تبدیلی سمیت دیگرکئی اقدامات اٹھائے گئے ہیں، وہیں ایک نیا ڈائٹ پلان بھی منظورکیا گیا ہے۔بھارتی کرکٹ ٹیم کے لیے منظورکیےجانےوالے ڈائٹ پلان میں یہ بات صاف درج ہے کہ کھلاڑی حرام گوشت کھانے سے گریزکریں گے اور صرف سرٹیفائیڈ حلال گوشت استعمال کریں گے۔

‎خیال رہے کہ بھارتی کرکٹ ٹیم کو ہدایت کی گئی ہے کہ وہ نیوزی لینڈ کے خلاف کانپور میں پہلے ٹیسٹ میچ کے دوران صرف حلال گوشت ہی استعمال کریں۔ بھارتی کرکٹ بورڈ کی جانب سے جاری کردہ ہدایت پر بھارتی میگزین آؤٹ لک اور دی ٹائمز آف انڈیا سمیت دیگر میڈیا گروپس نے بھی اپنے اکاؤنٹس سے بیان جاری کیے ہیں کہ کرکٹ بورڈ حلال گوشت کی ایڈورٹائزنگ کرکے بھارتی شائقین کی ناراضگی سمیٹ رہا ہے۔

کرکٹ ٹیم کے لیے منظور شدہ ڈائٹ پلان پر بھارت کی حکمراں جماعت بھارتیہ جنتا پارٹی کے ترجمان گورو گوئل ایڈووکیٹ نے کڑی تنقید کرتے ہوئے مطالبہ کیا ہے کہ کرکٹ ٹیم کے لیے جاری کردہ ڈائٹ پلان کو فوری طورپرواپس لیاجائے۔ گورو گوئل نے سوشل میڈیا پلیٹ فارم ’ٹوئٹر‘ پر ٹویٹ کیا ہے کہ کھلاڑی جو کچھ بھی کھانا چاہتے ہیں وہ کھائیں، یہ صرف ان کی مرضی ہے۔ انہوں نے استفسار کیا ہے کہ بھارتی کرکٹ بورڈ کو یہ حق کس نے دیا ہے کہ وہ حلال گوشت کی تشہیر کرے۔ ان کا کہنا ہے کہ یہ فیصلہ ذرا بھی درست نہیں ہے اسے فی الفور واپس لیا جائے۔

 

سابق وزیراعظم کی حالت نازک، آئی سی یو منتقل

رابطے میں رہیے

نیوز لیٹر۔

روزانہ کی بڑی خبریں حاصل کریں بذریعہ