• Saturday, 04 December 2021
ترقی کارکردگی سے مشروط ہے ، عمران خان

ترقی کارکردگی سے مشروط ہے ، عمران خان

اسلام آباد ( نیا ٹائم ) وزیر اعظم عمران خان نے کہا ہے کہ ریاست مدینہ میں صرف اچھی کارکردگی دکھانے والا جرنیل ہی اوپر آ سکتا ہے ، آخری سانس تک ملک میں قانون و انصاف کے لیے جنگ لڑتا رہوں گا ۔ اسلام آباد کے کنونشن سنٹر میں رحمۃ اللعالمین ﷺ کانفرنس کے دوران خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ پانامہ کیس میں کس طرح کے جھوٹ بولے گئے ، سب جانتے ہیں ، یہی کیس برطانوی عدالتوں میں ہوتا تو ملوث افراد اسی وقت جیل میں ہوتے ، پاکستانی اور مغرب کے عدالتی نظام میں زمین آسمان کا فرق ہے ۔ وزیر اعظم عمران خان نے کہا کہ جب تک قانون کی بالادستی نہیں ہوتی ، ملک اوپر نہیں جا سکتا ۔ برطانوی جمہوریت میں ووٹ بکنے کا تصور نہیں جبکہ یہاں سب جانتے ہیں کہ سینیٹ انتخابات کیسے ہوتے ہیں ۔ برطانیہ میں چھانگا مانگا کی سیاست نہیں ہوتی ، اخلاقیات کے معیار کے بغیر جمہوریت نہیں چل سکتی ۔ وزیر اعظم عمران خان نے کہا کہ ریاست مدینہ میں صرف اچھی کارکردگی کی بنیاد پر ہی کوئی اوپر آ سکتا ہے ، بڑا عہدوں پر کسی کی اجارہ داری نہیں تھی ، حضرت بلال  پہلے غلام تھے لیکن وہ اپنی قابلیت کی بنیاد پر وزیر خزانہ بنے ۔ ریاست مدینہ میں ترقی صلاحیت کے مطابق ہوتی تھی ، اور لیڈر بننے کے لیے صادق و امین ہونا از حد ضروری ہے ۔ انہوں نے کہا کہ ہم قانون کی بالا دستی قائم رکھنے کے لیے جنگ لڑ رہے ہیں اور جنگ جیتنے تک ملک میں جمہوریت میں بہتری نہیں آ سکتی نہ ہی خوشحالی ۔ انہوں نے کہا کہ معاشرے کے ٹھیک ہونے تک اور زندگی رہنے تک ملک میں انساف و قانون کی جنگ لڑتے رہیں گے ۔ انہوں نے کہا کہ صرف ایک پاکستانی آئی ایم ایف کے قرض سے زیادہ پیسہ رکھتا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ بیرون ملک مقیم 90 لاکھ پاکستانیوں میں سے صرف 30 سے 40 ہزار پاکستانی ہی اپنا سرمایہ پاکستان میں لگائیں تو ہمیں آئی ایم ایف کی ضرورت بھی نہیں پڑے گی ۔ تاہم پاکستانی نظام ان کی واپسی میں رکاوٹ ہے ۔ وزیر اعظم عمران خان نے مزید کہا کہ ہر سال ایک ہزار ارب ڈالر چوری ہو کر آف شور اکاؤنٹس میں منتقل ہوتا ہے ۔ جس سے لندن اور بڑے ممالک میں جائیدادیں خریدی جاتی ہیں ۔ انہوں نے کہا کہ ہمارے کلچر کو ہالی ووڈ اور بالی ووڈ کلچر نے تباہ کر دیا ہے ۔ ملک میں جنسی جرائم کی شرح میں تیزی سے اضافہ ہو رہا ہے ۔ بیرون ممالک میں شادی اڑھائی سال سے زیادہ نہیں چل سکتی کہ وہاں پر فحاشی عام ہے ۔، برطانوی خاندانی نظام ٹوٹ چکا ہے ،

رابطے میں رہیے

نیوز لیٹر۔

روزانہ کی بڑی خبریں حاصل کریں بذریعہ