• Wednesday, 20 October 2021
امریکی اور برطانوی شہری کابل کے ہوٹل سے نکل جائیں

امریکی اور برطانوی شہری کابل کے ہوٹل سے نکل جائیں

واشنگٹن / لندن ( نیا ٹائم ویب ڈیسک ) امریکی اور برطانوی حکومت نے اپنے شہریوں کو افغانستان کے ہوٹلوں سے فوری طور پر نکلنے کے لیے ہدایت نامہ جاری کر دیا ہے ۔ جاری کئے گئے ہدایت نامے کے مطابق امریکی اور برطانوی شہری افغان دارالحکومت کابل میں ہوٹلوں بالخصوص سرینا ہوٹل سے دور رہے اور اس کے قریبی علاقوں سے بھی دور ہو جائیں اور علاقہ فوری طور پر چھوڑ دیں ۔ غیر ملکی خبر رساں اداروں کے مطابق امریکا اور برطانوی حکومت نے افغانستان میں مقیم اپنے شہریوں کے لیے الرٹ جاری کیا ہے جس میں انہیں ہدایت دی گئی ہے کہ وہ ہوٹلوں میں ٹھہرنے سے گریز کریں ۔ امریکی محکمہ خارجہ کا کہنا ہے کہ امریکی شہری سکیورٹی خدشات کے پیش نظر سرینا ہوٹل اور اس کے اطراف میں نہ رہیں اور فوری طور پر اس علاقے سے نکل جائیں ۔ دوسری جانب برطانوی حکومت نے بھی کابل کے سرینا ہوٹل میں یا اس کے اطراف میں رہنے والے برطانوی شہریوں کو ہدایات جاری کی ہیں کہ وہ فوری طور پر کہیں اور منتقل ہو جائیں ، تاہم کسی دوسرے ہوٹل میں بھی ٹھہرنے سے گریز کریں ۔ اس سے قبل بھی کابل کے سرینا ہوٹل پر دو بار حملہ ہو چکا ہے ۔ اس ہوٹل میں زیادہ تر غیر ملکی حکام اور وفود قیام کرتے ہیں ۔ یہ ہوٹل کابل آنے والے تاجروں اور غیر ملکی مہمانوں میں بھی کافی مقبول ہے ۔ امریکی  اور برطانوی حکومت نے سکیورٹی الرٹ اس وقت جاری کیا ہے جب دوحہ میں امریکا کے طالبان کے ساتھ مذاکرات بے نتیجہ ختم ہو گئے ہیں ۔ جمعہ کے روز قندوز کی مسجد میں بھی خود کش حملہ ہوا تھا جس میں 100 سے زائد افراد جاں بحق ہوئے تھے ۔ اسی سرینا ہوٹل سے متعلقہ بھارتی اینکر ارنب گوسوامی نے بھی مضحکہ خیز خبر اڑائی تھی کہ اس کی پانچویں منزل پر پاک فوج کے افسران ٹھہرے ہیں ، حالانکہ یہ ہوٹل صرف دو منزل ہے ۔ واضح رہے امریکی انخلاء کے بعد امریکی اور برطانوی حکومتوں نے اپنے شہریوں کو کابل ائیر پورٹ سے دور رہنے کی ہدایات جاری کی تھیں اور اس کے فوری بعد کابل ائیر پورٹ پر خود کش حملہ ہوا تھا جس میں 200 کے قریب افراد ہلاک ہوئے تھے ۔